لیاقت آباد ٹاؤن میں SBCA کی ڈائریکٹر کے نام پر غیر قانونی عمارتیں تعمیر

رپورٹ : محمد نواز

ذرائع کے مطابق سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کی ڈائریکٹر جمیلہ جبیں نے مبینہ طور پر بلڈر مافیا سے معاملات طے کر لئے ہیں ۔ لیاقت آباد ٹاؤن کی ڈائریکٹر جمیلہ جبیں نے مبینہ طور پر غیر قانونی تعمیرات کی اجازت دی دے ہے ۔ غیر قانونی تعمیرات کی مد میں لاکھوں روپے رشوت وصول کر جا رہی ہے ۔

جمیلہ جبیں کی سرپرستی میں بلڈر مافیا کا اہم سرغنہ سر گرم ہے جس کا تعلق ایم کیو ایم لندن سے ہے ، جو ماضی میں ایم کیو ایم کا سابق یونٹ انچارج بھی رہ چکا ہے ۔ شکیل مکرانی نامی اس شخص نے جمیلہ جبین کے نام پر لیاقت آباد نمبر 5 سے 10 نمبر تک  40 گز سے لے کر 80 گز تک کے پلاٹوں پر 3 سے 6 منزلہ عمارتیں تعمیر کرنے کے ٹھیکے پکڑ لئے ہیں ۔ ان عمارتوں کے نقشے منظور ہیں نہ ہی واٹر بورڈ کا این او سی اور ایس بی سی اے کا سرٹیفکیٹ موجود ہے ۔

مزید پڑھیں: سابق ڈائریکٹر جنرل SBCA منظور قادر کاکا نے نیب سے ڈیل کیوں کی ؟

ڈائریکٹر لیاقت آباد ٹاؤن جمیلہ جبیں کو شکیل مکرانی نے لاکھوں روپے رشوت دے کر پلاٹ نمبر 5/419, 10/37, 9/226 اور 9/8 رہائشی پلاٹ پر کمرشل فلیٹ نما 4 سے 6 منزلہ غیر قانونی تعمیرات شروع کر رکھی ہیں جو کہ تکمیل کے آخری مراحل میں داخل ہو چکی ہیں ۔

ڈائریکٹر لیاقت آباد ٹاؤن جمیلہ جبیں کی سرپرستی میں زیر تعمیر سینکڑوں غیر قانونی تعمیرات کی تفصیلات متعلقہ اداروں کو بھی بھیجی جا رہی ہیں تاکہ ان عمارتوں کو روکوایا جائے ۔