کراچی یونین آف جرنلسٹ کے الیکشن مین کانٹے دار مقابلہ

کراچی : کراچی یونین آف جرنلسٹ (برنا) کے دو گروپوں کے مابین کانٹے دار مقابلے جاری ہے ۔ ایک گروپ دی پینل اور دوسرا پروگریسیو کے نام سے الیکشن میں حصہ لے رہا ہے ۔

دی پینل گروپ کی صدارت کے امیدوار نعمت اللہ بخاری ، وائس پریذیڈنٹ افضل بلوچ، جوائنٹ سیکرٹری فرحان راجپوت ، ٹریژار اختر شاہین رند ، ممبر ایگزیکٹیو کونسل کے لئے عبدالرحمن ، عنبر خان ، شخ معظم خان ، شاکر علی شامل ہیں ۔

دوسرے گروپ کی جانب سے صدارت کے امیدوار نظام الدین صدیقی ، وائس پریذیڈنٹ کیلئے اعجاز شیخ ، وائس پریذیڈنٹ کیلئے ایم جاوید قریشی ، جنرل سیکرٹری کے لیئے فہیم صدیقی ، جوائنٹ سیکرٹری کیلئے غلام قادر ضیا، جوائنٹ سیکرٹری کے لئے ایم یونس آفریدی ، ٹریژرار کیلئے لیاقت علی رانا اور ممبر ایگزیکٹیو کونسل کیلئے ایم اظہر ، میاں طارق جاوید ، قیصر عباس ، رانا ایم طاہر ، رضوان احد خان ، شمائلہ جیئے جا اور ریاض سہیل شامل ہیں ۔

مذید پڑھیں : حمزہ شہباز کا بکتر بند گاڑی میں عدالت پیش ہونے سے انکار

ادھر الیکشن کا انعقاد کراچی پریس کلب کے باہر ٹینٹ لگا کر کیا گیا ۔ الیکشن صبح 9 بجے شروع ہوئے اور شام 5 بجے تک جاری رہے ۔

دوسری جانب کراچی یونین آف جرنلسٹ برنا کے ایک گروپ کے صدر حسن عباس اور جنرل سیکرٹری عاجز جمالی اعلامیہ جاری کیا ہے جس میں کہا ہے کہ کراچی یونین آف جرنلسٹس کا کوئی الیکشن نہیں ہے ، بلکہ ایک دھڑے کی جانب سے اعلان کردہ الیکشن ہے ۔ جس کی لسٹ میں کراچی یونین آف جرنلسٹس اور پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس کے عہدیداروں سمیت سیکڑوں ممبران کے نام جعلی طور پر شامل کر کے یہ تاثر اور دھوکہ دینے کی کوشش کی گئی ہے کہ کے یو جے کا ہر رکن ووٹ کاسٹ کر سکتا ہے اور اس پر کوئی کارروائی نہیں ہو گی ۔

جب کہ پی ایف یوجے کے آئین میں یہ بات واضح طور پر موجود ہے کہ کوئی بھی شخص ایک وقت میں ایک ہی یونین کا ممبر ہو گا ، اگر وہ کسی اور یونین کی سرگرمیوں جیسا کہ الیکشن میں حصہ لے یا ووٹ کاسٹ کرے گا تو اس کی پہلی یونین کی رکنیت ختم ہو جائے گی ۔

مذید پڑھیں : ایک ہفتے میں سرمایہ کاروں کے 246 ارب روپے سے زائد روپے ڈوب گئے

کراچی یونین آف جرنلسٹس نے ریکارڈ پر موجود ہے کہ دھڑے بندی ختم کرنے کی ہر کوشش میں پہل کی مگر بدقسمتی سے دوسری جانب سے ایسی ہر کوشش کو نا کام بنا دیا گیا ۔ ہم کسی دھڑے کے الیکشن میں نہ تو مداخلت کرنا چاہتے ہیں اور نہ ہی کسی کو اپنے لیے یہ اجازت دیں گے ۔ ممبران کسی دھوکے کا شکار نہ ہوں ۔ کے یوجے کے الیکشن کے لیے تمام ممبران کو پہلے سے مطلع کیا جائے گا ۔ لہذاہ کسی الیکشن سے کراچی یونین آف جرنلسٹس کا کوئی تعلق نہیں ہے ۔

الیکشن اختتام پذیر ہو گئے ہیں جس کے بعد اب نتائج کے لئے ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے ۔ معلوم رہے کہ کراچی یونین آف جرنلسٹ کے کارکنان کی ایک بڑی تعداد نے 5 ماہ تک فیس جمع نہیں کرائی جس کی وجہ سے 5 سو سے 600 تک کارکنان کو ہی ووٹ کا حق رائے دہی استعمال کرنے کی اجازت دی گئی ہے ۔