لیفٹننٹ جنرل (ر) عبدالقادر بلوچ نے ن لیگ چھوڑ دی

 کوئٹہ : مسلم لیگ (ن) میں اندرونی سطح پر تنازعات شدت اختیار کر گئے جس کے بعد بلوچستان سے پارٹی کے اہم رکن اور سابق وفاقی وزیر لیفٹننٹ جنرل (ر) عبدالقادر بلوچ نے ن لیگ چھوڑ دی۔

مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق وزیراعلی بلوچستان ثناء اللہ زہری کو اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے کوئٹہ جلسے میں نہ بلانے پر تنازع شدت اختیار کرگیا، جس کے بعد پارٹی کے صوبائی صدر لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبدالقادر بلوچ نے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا۔

اس حوالے سے بتایا جارہا ہے کہ عبدالقادر بلوچ پارٹی سے علیحدگی کا باضابطہ اعلان ایک پریس کانفرنس کے ذریعے کریں گے۔

مزید پڑھیے: مسلم لیگ ن کے 5 رہنمائوں کو پارٹی سے نکال دیا گیا

میڈیا رپورٹس کے مطابق مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت اور لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبدالقادر بلوچ میں تنازعہ اس وقت پیدا ہوا جب سابق وزیراعلی بلوچستان ثناء اللہ زہری کو پی ڈی ایم کے کوئٹہ جلسے میں مدعو نہیں کیا گیا۔

پی ڈی ایم کے سیکریٹری جنرل شاہد خاقان عباسی نے پارٹی قیادت کی مشاورت کے بعد ثناء اللہ زہری کو جلسے میں مدعو کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا تھا کہ ثناء اللہ زہری اڑھائی سال سے ملک میں موجود نہیں، اور وہ پی ڈی ایم کے جلسے کا حصہ نہیں بن سکتے۔

پارٹی قائدین نے اس وقت کے وزیراعظم نواز شریف کے منع کرنے کے باوجود وزارت اعلیٰ بلوچستان کے عہدے سے استعفیٰ دینے کے فیصلے کو بھی تنازعات کی بڑی وجہ قرار دیا ہے۔

مزید پڑھیے: پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ ن میں پھر فاصلے بڑھنے لگے

انھوں نے یہ بھی کہا ہے کہ جب ثناء اللہ زہری تحریک کے ساتھ ہی نہیں ہیں تو پھر انہیں پی ڈی ایم جلسے میں کیوں بلایا جائے؟ علم میں رہے کہ عبدالقادر بلوچ نوازشریف کی کابینہ میں وفاقی وزیر بھی رہ چکے ہیں اور اس وقت مسلم لیگ (ن) بلوچستان کے صدر ہیں ۔