بی ایس آنرز کا نصاب HEC نے ورلڈ بینک فنڈنگ کی وجہ سے ختم کیا

اسلام آباد : ہائیر ایجوکیشن کمیشن (ایچ ای سی) کی طرف سے قابلیت پر مبنی نصاب تعلیم رائج کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ اس نصاب کی تیاری کے لیے ایک ہزار سٹیک ہولڈرز کے ساتھ مکالمہ کیا گیا ۔ نیا نصاب ملک بھر کی جامعات سمیت الحاق شدہ کالجوں میں بھی رائج ہو گا ۔

پاکستان میں انڈرگریجویٹ تعلیم کے متعدد اور معروف تنقیدی نکات پائے جاتے ہیں جو کہ خصوصاََ ملازمت دہندگان اور داخلہ کمیٹیوں کی طرف سے اٹھائے جاتے ہیں ۔ پُرانا نصاب طلباء کو اکیسویں صدی میں مطلوب لازمی صلاحیتیں جیسا کہ تخلیقی سوچ، مﺅثر ابلاغ، مسائل کے حل کی صلاحیت ، عددی تجزیہ ، ٹیم کی تشکیل اور تحقیقی طریقہ کار کی صلاحیت فراہم نہیں کرتا ۔

اس نصاب کا مقصد تعلیمی عنصر عمومیت اور خصوصیت میں توازن قائم کرنا ہے ۔ اول سمیسٹروں میں ہر طالب علم کے لیے انسانی علوم کے اہم ترین شعبے یعنی آرٹس، ہیومینٹیز، نیچرل سائنسز، سوشل سائنسز، کوانٹی ٹیٹیو ریزننگ ، اور ایکسپوزٹری رائٹنگ میں جنرل ایجوکیشن کے کورسزاور پاکستان اسٹڈیز اور اسلامک اسٹڈیز کے کورسز کی تکمیل لازمی ہے ۔

مذید پڑھیں : سکھر IBA بھرتی پرائمری اساتذہ 12 برس سے ترقی کے منتظر

طلباء کو ایک میجر یا ڈبل میجرز کے علاوہ ایک یا دو مائنرز سمیت ایک میجر میں گریجویشن کے حوالے سے بھی لچک کی سہولت دستیاب ہو گی ۔ نئے نصاب میں عملی تجربے کو گریجویشن کی لازمی ضرورت قرار دیا گیا ہے ۔ سب طلباء کے لیے انٹرن شپ کرنا لازمی ہو گی اور اضافی صلاحیتوں جیسے انٹر پری نیورشپ ، بزنس ڈیویلپمنٹ وغیرہ کا انتخاب کرنا بھی ضروری ہو گا ۔ اگرچہ عملی کام کا طلباء کے ریکارڈ میں جانچا اور شامل کیا جائے گا تاہم اس کی باقاعدہ کریڈٹ ریکوائرمنٹس نہیں ہوں گی ۔

نئے انڈرگریجویٹ پروگراموں میں طلباءکے لیے ایک ڈگری پروگرام سے دوسرے کی طرف منتقلی ممکن ہو گی ۔ پیشہ ورانہ ڈگری پروگرام میں داخلہ لینے والے طالب علم جنرل ڈگری پروگرام میں بھی منتقل ہو سکیں گے ۔ انڈرگریجویٹ تعلیم کے معیار کو محض نصاب کی تشکیل نو کے ذریعے بہتر نہیں بنایا جا سکتا ۔

عالمی بینک کی طرف سے ہائیر ایجوکیشن ڈیویلپمنٹ ان پاکستان پروگرام کے تحت انڈرگریجویٹ نصاب کے آغاز کے لیے جزوی معاونت فراہم کی جاچکی ہے۔ ایچ ای سی ورلڈ بینک کی اس پانچ سالہ پروگرام پر عمل درآمد کررہا ہے۔ اس پروگرام کا مقصد معیشت کے تزویراتی شعبہ جات میں تحقیقی سبقت، تدریس اور سیکھنے کے عمل میں بہتری، اور اعلٰی تعلیم کی گورننس کی مضبوطی میں مدد فراہم کرنا ہے۔ ایچ ای سی کا پوسٹ سیکنڈری ایجوکیشن ریفارم یونٹ اس پروگام کے تحت تدریس اور سیکھنے کے عمل کے عوامل کی بہتری کے لیے سرگرم عمل ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *