فواد حسن فواد کے چہیتے افسر کا بے نامی جائیداد کیسز ختم کرانے کی تیاری

ایک قانونی نوٹس تیار کر کے ایڈووکیٹ سپریم کورٹ فیصل مفتی کی جانب سے وزیر اعظم عمران خان کو بھی ارسال کر دیا گیا۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کے دائیں‌ بازو سمجھے جانے والے فواد حسن فواد نے لیگیوں کی بے نامی جائیدادوں ‌کے کیسز ختم کرنے کے لیے جال تیار کر لیا گیا ہے –

تنویر اختر ملک فیڈرل بورڈ آف ریونیو (FBR) کا ایک افسر تھا ، جو جنوری 2019 میں ریٹائر ہو چکا، دوران سروس فواد حسن فواد نے اس کو راولپنڈی ٹیکس آفس کا چیف کمشنر لگائے رکھا تا کہ وہ فواد حسن فواد اور اس کے خاندان کی پنڈی پلازون میں انوسٹمنٹ کو چھپائے رکھے، یہ کام اس نے بخوبی انجام دیا اور آخر تک دیتا رہا ۔

اس کے علاوہ یہ فواد حسن فواد کے زور اور بل بوتے پر شریف فیملی اور ان کے ٹیکس کے معاملات میں ردوبدل پر بھی اثر انداز ہوا ۔FBR کی مخبریاں کرنا اور ان افسروں کی نشاندہی کرنا جو ن لیگ کے ہمدرد نہی تھے براہِ راست فواد حسن فواد کو کرنا اس کے معمولات میں تھا ۔

مذید پڑھیں : پاکستان کے طاقتور افسر فواد حسن فواد آج جیل میں ریٹائر ہوں گے ،

اس نے کچھ کیسز میں سپریم کورٹ کو غلط معلومات دیں ، جس سے کیسز کے رُخ مڑ گئے، جب یہ بات سپریم کورٹ کے علم میں آئی تو کورٹ نے حکم دیا کہ اس کو چارج شیٹ کیا جائے ۔ چناچہ چارج شیٹ بنا کر پرائم منسٹر کی منظوری کے لیے بھیجی گئی تو وہاں فواد حسن فواد نے دبادی اور اسے 21 گریڈ میں پروموٹ بھی کروا دیا لیکن وہ چارج شیٹ باہر نہ نکلی ۔

فواد حسن فواد نے اس کے ریٹائرمنٹ سے پہلے ہی جیل سے بیٹھ کر FTO کے ذریعے اس کی، FTO میں مشیر کی پوسٹنگ کروا دی، کیونکہ FTO سیکھیرا ن لیگ کا خاص آدمی اور فواد ہی کا لگوایا ہوا تھا، اس پوسٹنگ کا مقصد FTO میں فواد اور شریف فیملی کے کیس ختم کرنا تھا۔

مذید پڑھیں : جامعہ NED انٹری ٹیسٹ میں 9239 امیدواروں کی شرکت کا امکان

اب فواد نے نہایت چالاکی سے اس کو اس adjudication کمیٹی میں لگوایا جو بے نامی جائیدادون کے کیس سنے گی، اس کا مطلب بھی صاف ظاہر ہے، فواد اور ن لیگیون کی بے نامی جائیدادون کے مقدمے ختم کرنا ہے ۔ اسی سے متعلق ایک قانونی نوٹس تیار کر کے ایڈووکیٹ سپریم کورٹ فیصل مفتی کی جانب سے وزیراعظم عمران خان کو بھی ارسال کر دیا گیا ہے –

Show More

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close