مصالحہ دار خبروں کے بجائے تصدیق شدہ خبروں کی اشاعت پر توجہ دی جائے، صحافی فورم

صحافت کسی معاشرے میں بڑھنے والی برائیوں پر نظر رکھتی ہے اور معاشرے کے غیر ذمہ دارانہ اور بددیانت کرداروں کو سامنے لاتی ہے-

یونائیٹڈ میڈیا فورم اور ینگ جرنلسٹ سوسائٹی انٹرنیشنل کے سیمینار میں‌ صحافیوں پر زور دیا گیا ہے کہ صحافیوں کو مصالحہ دار خبروں کے بجائے تصدیق شدہ خبروں کی اشاعت پر توجہ دینا چاہیے-

یونائیٹڈ میڈیا فورم اور ینگ جرنلسٹ سوسائٹی انٹرنیشنل کے اشتراک سے آن لائن سیمینار ہوا جس میں سعودی عرب سمیت مختلف ممالک سے اوورسیز پاکستانی صحافیوں نے شرکت کی-

جس میں سعودی عرب سمیت مختلف ممالک سے اوورسیز پاکستانی صحافیوں نے شرکت کی۔

اس موقع پر مقررین کا کہنا تھا کہ صحافت کسی بھی معاشرے کی اخلاقی قدروں کو مضبوط کرنے میں نہایت اہم کردار ادا کرتی ہے، ایک ذمہ دار صحافی اپنے قلم سے معاشرے کی رائے عامہ کی تشکیل میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے-

مقررین نے اس بات پر زور دیا کہ انٹرویو کے دوران زمہ دارانہ صحافت کا مظاہرہ کرنا نہایت ضروری ہے، کسی بھی موضوع یا شخصیت کے انٹرویو سے پہلے اس کے بارے میں ریسرچ کرنی چاہیے، پھر سوالات کی لسٹ بنائی جائے اور کوشش کی جائے کہ سوالات موضوع سے ہٹ کر نہ کئے جائیں۔

سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے مقررین کا مذید کہنا تھا کہ صحافت کسی بھی معاشرے کی اخلاقی قدروں کو مضبوط کرنے میں نہایت اہم کردار ادا کرتی ہے، ایک ذمہ دار صحافی اپنے قلم سے معاشرے کی رائے عامہ کی تشکیل میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ صحافت کسی معاشرے میں بڑھنے والی برائیوں پر نظر رکھتی ہے اور معاشرے کے غیر ذمہ دارانہ اور بددیانت کرداروں کو سامنے لاتی ہے-

ان نے کہا کہ ٹیکنالوجی میں ترقی کے باعث صحافی حضرات کو مسلسل اپنے آپ کو جدید علوم سے آگاہ کرنا ہوگا، ایک صحافی سچی خبریں دے کر معاشرے میں سچ پھیلا سکتا ہے-

مقررین کا کہنا تھا کہ صحافیوں کو مصالحہ دار خبروں کے بجائے تصدیق شدہ خبروں کی اشاعت پر توجہ دینا چاہیے۔

مقررین نے یہ بھی کہا کہ صحافی کا کام معاشرے میں ہونے والی زیادتیوں، ناانصافیوں ظلم کرپشن، دھوکہ دہی فراڈ، رشوت کا بازار گرم رکھنے والوں کے خلاف اواز بلند کرنا ھے اور معاشرے کی ان کالی بھیڑوں کو بے نقاب کرنا ھے اور ہر حال میں اپنی صحافت کی حرمت کا ہتھیار دیانت داری کے ساتھ استعمال کرنا ھے-

ان کا کہنا تھا کہ اسی طرح وہ معاشرے سے گندگی کی نشاندہی کرتے ہوے تعمیر انسانیت میں اپنی خدمات انجام دے سکتا ہے۔

Show More

اکرام الدین

اکرام الدین نے صحافت کا آغاز 2010 سے کیا ہے۔ اکرام الدین اس وقت الرٹ نیوز سے بھی منسلک ہیں۔ اس کے علاوہ پاکستان، بھارت، دبئی، امریکا، برطانیہ، فرانس، اٹلی، اور جرمنی کے مختلف اخبارات کے ساتھ مختلف عہدوں پر فائز ہیں اور بین الاقوامی صحافتی تنظیم جذبہ اتحاد یونین آف جرنلسٹ یورپ کے بانی و صدر بھی ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close