تمام افواہیں دم توڑ گئیں، آصف زرداری زندہ ہیں!

پاکستان پیپلز پارٹی‌ (پی پی پی) کے شریک چیئرمین اور سابق صدر پاکستان آصف علی زرداری سے متعلق تمام افواہیں دم توڑ گئیں-

سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر سابق صدر کے خلاف یہ چہ مگوئیاں ہوتی رہیں کہ وہ اب اس دنیا میں نہیں رہے-

لوگوں کی جانب سے یہ دقیانوسی باتیں بھی سننے کو ملیں کہ کورونا وبا کی وجہ سے سابق صدر کی موت کو ایک راز میں رکھا جارہا ہے-

ماہر سیاسیات کہتے رہے کہ یہ تمام افواہیں جھوٹ پر مبنی ہیں اور آصف علی زرداری حیات ہیں-

مزید پڑھیے: علی زیدی نے زرداری اور اویس ٹپی سے متعلق انکشافات پر حبیب جان کی ویڈیو جاری کردی

دوسری جانب پاکستان پیپلز پارٹی اور خود چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کی جانب سے بھی بارہا یہ کہا جاتا رہا کہ ان کے والد حیات ہیں-

تاہم اس سے متعلق یہ اطلاعات بھی سامنے آئیں‌ تھیں کہ ان کی طبعیت ناساز ہے اور وہ انتہائی نگہداشت میں‌ ہیں-

ان اطلاعات کے بعد تو جیسے مخالفین کی جانب سے کوئی موقع نہیں چھوڑا گیا، چاہے مولانا فضل الرحمٰن سے ملاقات کی فوٹو ہو یا پھر شہباز شریف سے ٹیلی فونک رابطہ، غرض ہر موقع پر جھوٹ کا ڈھول بجتا چلا گیا-

اس وقت ایک عام پاکستان قومی احتساب بیورو (نیب) پر بھرپور اعتماد کرتا ہے، بالخصوص حکومتی حلقوں کی حمایت کرنے والے افراد، اور وہی آصف علی زرداری کی حیاتی کو موت میں تبدیل کرنے کی مذموم کوششیں کرتے رہے ہیں-

مزید پڑھیے: آصف علی زرداری کی شادی کس نے اور کیوں کروائی ؟

اب مقامی میڈیا میں یہ رپورٹس سامنے آئی ہیں کہ نیب نے سابق صدر مملکت پر فردِ جرم عائد کرنے کے لیے ویڈیو لنک سماعت کا انتظام کر لیا ہے-

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ نیب جیسے “معتبر” ادارے کو علم ہے کہ آصف علی زرداری حیات ہیں تب ہی ان کی ویڈیو لنک کے ذریعے سماعت کے انتظامات کر رہا ہے-

نیب کی ٹیم کراچی میں‌ ویڈیو لنک کے ذریعے سابق صدر زرداری کیخلاف ٹھٹھہ واٹر سپلائی کے غیرقانونی ٹھیکوں کے ریفرنس کے معاملہ پر فردِ جرم کیلئے وڈیو لنک انتظام کرنے آصف زرداری کے گھر پہنچی تھی۔

عمران خان اور قومی احتساب بیورو پر ایمان رکھنے والے پاکستانیوں کو اب آصف علی زرداری کے صحت مند ہونے پر کسی بھی طرح شک نہیں ہونا چاہیے-