شراب خانوں کو بند نہ کرنے پر راشد سومرو کی سندھ حکومت کو وارننگ

کراچی : جمعیت علماء اسلام صوبہ سندھ سندھ کے سیکریٹری جنرل علامہ راشد محمود سومرو نے جعلی ڈومیسائل بنانے پر تفتیش اور کارروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہیکہ سندھ میں شراب خانوں کو بند کرکے سرکاری ہسپتالوں میں عوام کا علاج شروع کیا جائے.

ان خیالات کا اظہار انہوں نے جے یو آئی کے صوبائی ڈپٹی سیکریٹری اطلاعات محمد سمیع الحق سواتی سے ٹیلیفون پر گفتگو کرتے ہوئے کیا.

مولانا راشد محمود سومرو نے کہا کہ ہم سندھ میں دوسرے صوبوں کے جعلی ڈومیسائل بنانے پر قائم کردہ کمیشن کا خیر مقدم کرتے ہیں.

مزید پڑھیے: مولانا راشد سومرو نے حکومت سندھ کو سخت پیغام دے دیا

جمعیت علمائے اسلام سندھ کے سیکریٹری جنرل علامہ راشد محمود سومرو نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ سندھ میں جعلی ڈومیسائل کے کاروبار میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کی جائے، چیف سیکرٹری کی جانب سے قائم کردہ کمیشن تفتیش کرے اگر جعلی ڈومیسائل بنانے کے ثبوت ملتے ہیں تو پھر پیپلزپارٹی اور سندھ حکومت کو جواب دینا ہوگا کہ یہ غلط کام کس طرح ہوا ہے.

انہوں نے کہا کہ سندھ پر حق صرف اہلیان سندھ کا ہے، نوجوانوں کے حقوق پر ڈاکے ڈالنے کی اجازت نہیں دی جائے گی.

علامہ راشد سومرو نے کہا کہ بتایا جا رہا ہے کہ پیپلز پارٹی اور سندھ حکومت کی ملی بھگت سے غیر قانونی جعلی ڈومیسائل بنائے جا رہے ہیں، لاک ڈاؤن کے باوجود لاڑکانہ اور دیگر اضلاع میں شراب کے گتوں پر عائد پابندی ختم کرنے اور انہیں بے دھڑک اجازت دینے کے سندھ حکومت کے فیصلے کو مسترد کرتے ہیں.

مزید پڑھیے: جمعیت علماء اسلام کسی مسجد کو سیل نہیں ہونے دے گی : راشد محمد سومرو

انہوں نے کہا کہ ایک طرف مدارس مساجد اور کاروبار کی بندش سے عام لوگوں کی زندگی اجیرن بنائی گئی ہے تو دوسری طرف شراب کے گتے کھولنے کی اجازت دینا عذاب خداوندی کو دعوت دینے کے مترادف ہے.

علامہ راشد سومرو کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت نے شراب خانے کھولنے کا فیصلہ واپس نہ لیا تو جے یو آئی کے کارکنان شراب کے گتوں کی تالا بندی کریں گے.

انہوں نے کہا کہ لاڑکانہ سول ہسپتال سمیت سندھ میں سرکاری ہسپتالوں میں علاج نام کی کوئی چیز نہیں ہے، آغا خان اسپتال کراچی اور لاڑکانہ سول ہسپتال کی بجٹ برابر ہے مگر علاج نہیں ہے.

مزید پڑھیے: الکوحل کا شرعی حکم کیا ہے ؟

مولانا راشد محمود سومرو کا مزید کہنا تھا کہ سرکاری ہسپتالوں میں علاج میڈیسن کے مد میں اربوں روپے کا بجٹ کہاں استعمال ہو رہا ہے.

انہوں نے کہا کہ اگر لاڑکانہ سمیت سرکاری ہسپتالوں میں علاج نہیں کیا گیا تو جے یو آئی سخت احتجاج کرے گی، سرکاری ہسپتالوں میں خرچ کی گئی رقم کا حساب دینا ہوگا.

رہنما جے یو آئی نے کہا کہ غریب عوام علاج نہ ہونے کی وجہ سے پریشان ہیں ، سندھ حکومت کرونا وائرس پر سیاست کرنے کی بجائے عوام کے علاج اور انہیں بنیادی حقوق کی فراہمی پر توجہ دے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *