شیخ الحدیث والتفسیر علامہ ڈاکٹر خالد محمود 95 برس کی عمر میں انتقال کر گئے

علامہ خالد محمود رحمة اللہ علیہ چلتا پھرتا کتب خانہ اور ہمارا مشترکہ اثاثہ تھے اس لیے ہم سب ان کی رحلت پر تعزیت کے مستحق ہیں

لندن : شیخ الحدیث والتفسیرعلامہ خالد محمود 95 برس کی عمر میں انتقال کر گئے ، قادیانیت سمیت دیگر فرقہ باطلہ کیخلاف بھرپور کام کیا ۔ وفاق المدارس العربیہ پاکستان ، عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت ، اہلسنت والجماعت پاکستان ، ادارہ ارشادالمبلغین ، پاکستان علما کونسل ، مجلس علمائے کراچی سمیت دیگر کی جانب سے مولانا ڈاکٹر خالد محمود کی رحلت کو عظیم سانحہ قرار دیا جا رہا ہے ۔

وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے قائدین نے علامہ خالد محمود رحمة اللہ علیہ کی رحلت پر رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مفکر اسلام علامہ خالد محمودرحمہ اللہ کی رحلت سے پیدا ہونے والا خلا صدیوں باقی رہے گا ۔ علامہ خالد محمود رحمة اللہ علیہ چلتا پھرتا کتب خانہ تھے ۔ وفاق المدارس کے قائدین نے کہا ہے کہ علامہ خالد محمود رحمة اللہ علیہ کی دینی ، ملی اور علمی خدمات آب زر سے لکھنے کے قابل ہیں ۔

مذید پڑھیں : مولانا ڈاکٹر خالد محمود ؒ کون تھے ؟

انہوں نے کہا کہ علامہ خالد محمود کی رحلت پر ہم سب تعزیت کے مستحق ہیں ۔ ہم ان کے پسماندگان سے مسنون تعزیت کا اظہارکرتے ہیں ۔ انہوں نےمساجد کے ائمہ و خطباء اور مدارس کے منتظمین سے اپیل کی کہ علامہ مرحوم کے لیے خصوصی دعاوں کا اہتمام کریں ۔ وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے رہنماؤں مولانا ڈاکٹر عبدالرزاق اسکندر ، مولانا انوار الحق ، مولانا مفتی محمد رفیع عثمانی اور مولانا محمد حنیف جالندھری نے اپنے تعزیتی بیان میں مفکر اسلام علامہ خالد محمود رحمة اللہ علیہ کی رحلت پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی رحلت سے پیدا ہونے والا خلا صدیوں باقی رہے گا –

انہوں نے کہا کہ اسلام کی حقانیت اوراہل باطل کی تردید کے حوالے سے علامہ خالد محمود مرحوم کا کام ہمیشہ امت کی رہنمائی کرتا رہے گا ۔ وفاق المدارس کے رہنماوں نے کہا کہ علامہ خالد محمود اسلاف کی یادگار تھے اور وفاق المدارس جیسے موقر ادارے کی تشکیل کے مراحل کے عینی شاہد تھے – وفاق المدارس کے قائدین نے کہا کہ علامہ خالد محمودرحمة اللہ علیہ چلتا پھرتا کتب خابہ اور ہمارا مشترکہ اثاثہ تھے اس لیے ہم سب ان کی رحلت پر تعزیت کے مستحق ہیں – انہوں نےعلامہ مرحوم کے جملہ پسماندگان سے مسنون تعزیت کا اظہار کیا اور ملک بھر کی مساجد کے ائمہ و خطباء سے مرحوم کے لیے خصوصی دعاوں کا اہتمام کرنے کی اپیل کی –

مذید پڑھیں : قومی دن کے موقع پر اسرائیل کا دبئی میں سفارتخانہ کھولنے کا اعلان

علامہ ڈاکٹر خالد محمود کی رحلت امت مسلمہ کے لیے بڑا سانحہ ہے۔ آپ نے زندگی بھر قادیانی فتنہ کے تعاقب میں جو علمی خدمات سر انجام دیں وہ بہت بڑا اثاثہ ہے۔ علامہ ڈاکٹر خالد محمود عظیم شخصیت تھے، جنہوں نے برصغیر پاک و ہند کے علماء کرام کی سرپرستی دم آخر تک جاری رکھی، امت مسلمہ کے خلاف اٹھنے والے تمام باطل فتنوں، بالخصوص قادیانیت کے خلاف قابل قدر خدمات سرانجام دیں۔ اس میدان میں آپ نے پیرانہ سالی کے باوجود اہلِ حق کی نمائندگی کا حق ادا کیا ۔ آپ کی رحلت سے ہم سب کا بہت بڑا نقصان ہوا ہے جس کی تلافی قدرتِ حق ہی کر سکتی ہے ۔

آپ جامعہ اسلامیہ ڈابھیل کے فاضل اور محقق عالم دین تھے، جن کی علمی خدمات سے علم و تحقیق کی دنیا روشن رہی ہے۔ آپ اکابرین کی یادگار تصویر تھے اور انہی کے نقش قدم پر ساری زندگی امت کی رہنمائی کرتے رہے۔ مرحوم عرصہ دراز سے برطانیہ میں مقیم تھے اور وہیں رمضان کے مبارک مہینہ میں اپنے رب سے جا ملے ۔

ان خیالات کا اظہار عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے امیر مرکزیہ مولانا ڈاکٹر عبدالرزاق اسکندر، نائب امیر مرکزیہ مولانا حافظ ناصرالدین خاکوانی، مولانا خواجہ عزیز احمد، مرکزی ناظم اعلی مولانا عزیز الرحمان جالندھری، مرکزی رہنما مولانا اللہ وسایا، مولانا محمد اسماعیل شجاع آبادی، مولانا حافظ محمد اکرم طوفانی، مفتی شہاب الدین خان پوپلزئی، علامہ احمد میاں حمادی، مولانا عزیز الرحمان ثانی، مولانا محمد اعجاز مصطفیٰ ، مولانا قاضی احسان احمد و دیگر نے اپنے تعزیتی پیغام میں کیا ہے ۔ عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت نے دعا کی ہے کہ اللہ تعالیٰ آپ کی کامل مغفرت اور جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائے۔ آپ کے لواحقین اور دنیا بھر میں پھیلے ہوئے شاگردوں اور متعلقین کو صبر جمیل عطا فرمائے ۔

مذید پڑھیں : قوم کا غیر سنجیدہ رویہ!

ادارہ ارشاد المبلغین کے رہنما علامہ ظہیر احمد ظہیر اعوان پاکستان میں علامہ ڈاکٹر خالد محمود کے قریبی شاگردوں میں شمار ہوتے تھے ۔ علامہ ظہیر احمد ظہیر کانے اپنے تعزیتی بیان میں کہا ہے کہ عجب قیامت کا حادثہ ہے ،سیدی ،سندی ، وسیلتی فی الدارین، والدی، مربی و مرشدی حضرت علامہ خالد محمود ؒ آج جن کو رحمہ اللہ کنے کی ہمت نہیں ۔ یہ صدمہ بھی ہم نے اپنی زندگیوں میں سننا تھا کہ اس بے بسی میں ہم سے ہزاروں میل دور ہمارے محبوب یوں جدا ہونگے ۔

Show More

اختر شیخ

اختر شیخ (بیورو چیف کراچی) جن کی صحافتی جدوجہد 3 دہائیوں پر مشتمل ہے، آپ الرٹ نیوز سے منسلک ہونے سے قبل آغاز نیوز ٹائم، روزنامہ مشرق، روزنامہ بشارت اور نیوز ایجنسی این این آئی کے ساتھ مختلف عہدوں پر کام کیا ہے۔ اختر شیخ کراچی پریس کلب کے ممبر ہیں اور کے یو جے (برنا) کی بی ڈی ایم کے ممبر بھی ہی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close