عمران خان کا طالبان سے اجازت لیکر الیکشن مہم چلانے کا انکشاف

اسلام آباد : عمران خان نے سیاسی ریلیاں و جلسے نکالنے کی اجازت کے لئے ہم سے خطوط لکھ کر درخواستیں کی تھیں ۔ سابق ترجمان پاکستانی طالبان احسان اللہ احسان نے نیا انکشاف کردیا ہے ۔

سابق طالبان ترجمان احسان اللہ احسان نے انکشاف کیا ہے کہ عمران خان خیبر پختون خواہ سمیت ملک بھر میں ریلیاں و جلسے منعقد کرنے کے لیئے قبل از وقت اجازت لینے کے لیئے طالبان کی منتیں کرتے رہے تھے ۔ پاکستانی حکام کی حراست سے فرار ہونے کے تین ماہ بعد احسان اللہ احسان خاموشی توڑتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے 2011،12 میں ٹی ٹی پی کے سربراہ حکیم اللہ محسود کو دو خطوط لکھے تھے ۔

مذید پڑھیں : عمران خان نے جیو ٹی وی سے پھر مدد مانگ لی

احسان اللہ احسان کے مطابق ان خطوط میں عمران خان نے جنوبی وزیرستان میں سیاسی ریلیاں و جلسے منعقد کرنے کے لیئے طالبان سے اجازت مانگی تھی ۔ بھارت سے شائع ہونے والے اخبار و میگزین ’’دی سنڈے گارڈین ‘‘ نے حکیم اللہ محسود کے قریب رہنے والے اور سابق طالبان ترجمان احسان اللہ احسان سے انٹرویو کیا ہے جس میں لکھا ہے کہ ” میں اس وقت ٹی ٹی پی کا ترجمان تھا ، یہ میری ذمہ داری تھی کہ ایسے خطوط کے جوابات لکھوں ، خط عمران خان کی پارٹی کے رہنمائوں کی طرف سے ہم تک لایا گیا تھا ۔ جس پر خود عمران خان کے دستخط تھے ، دونوں مواقعوں پر طالبان رہنمائوں کا موقف لینے کے بعد میں نے جوابات لکھے اور عران خان کو بھیج دیئے گئے تھے ” ۔

شائع ہونے والے انٹرویو کے مطابق احسان اللہ احسان کا کہنا تھا کہ وہ اس خط کے مندرجات اور اس وقت کے جوابات کے بارے میں بات نہیں کر سکتے ہیں ۔ لیکن وہ پاکستانی سیاست دانوں کے تحریک طالبان کے ساتھ تعلقات کو آشکار کرنے کے لیئے مستقبل میں ایسا کر بھی سکتے ہیں ۔ احسان اللہ احسان نے عمران خان کے بارے میں مذید لکھا کہ وہ نجی زندگی میں کچھ ہیں اور عوام میں کچھ اور بات کرتے ہیں ” ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *